Home / انٹرنیشنل / لندن: وکی لیکس کے بانی شریک جولین اسانجے کو ضمانت پر رہائی کا ناجائز فائدہ اٹھانے پر پچاس50 ہفتوں کے لیے قید کی سزا سنا دی گئی

لندن: وکی لیکس کے بانی شریک جولین اسانجے کو ضمانت پر رہائی کا ناجائز فائدہ اٹھانے پر پچاس50 ہفتوں کے لیے قید کی سزا سنا دی گئی

بدھ کے روز وکی لیکس کے شریک بانی جولین اسانجے کو برطانوی عدلیہ نے ضمانت پر رہائی کا ناجائز فائدہ اٹھانے پر پچاس ہفتوں کے لیے قید کی سزا سنا دی۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ (skipping bail) کے جرم میں جولین اسانجے کو یہ سزا سنائی گئی۔ جولین اسانجے نے پچھلے سات سال سے لندن میں موجود ”ایکویڈر“ ایمبیسی میں پناہ حاصل کی ہوئی تھی، جہاں سے پولیس نے ان کو پچھلے مہینے گرفتار کیا۔

ایک اور ملک سے عبادت گاہ پر حملے کی اطلاعات آگئیں

 s8

جولین اسانجے نے2012 میں زیادتی کیس میں ضمانت پر رہائی حاصل کی تھی، اور سویڈن کے حوالے کر دیے جانے کے ڈر سے انھوں نے ایکویڈر ایمبیسی میں پناہ حاصل کی اور عدالتی کاروائی سے پچتے رہے۔ سویڈن کی دو خواتین نے 2010 میں جولین اسانجے پر جنسی تشدد اور زیادتی کا الزام لگا کر مقدمہ درج کروایا تھا، جولین اسانجے لمبے عرصے یہ کیس لڑتے رہے، تا ہم انھوں نے 2012 میں سویڈن حکومت کو حوالگی کے ڈر سے ایکویڈر ایمبیسی میں پناہ حاصل کی۔ جولین اسانجے نے ہمیشہ اس الزام کی نفی کی ہے۔ سویڈن حکومت کی طرف سے 2017 میں یہ کیس ختم کر دیا گیا تھا، تاہم جولین اسانجے ایکویڈر ایمبیسی میں پناہ گزین رہے۔

بلاول بھٹو صاحبہ کی طرح پرچی پر نہیں آیا میں،وزیر اعظم عمران خان

جولین اسانجے کے وکیل نے عدالت کو بتایا کہ جولین اسانجے نے صرف اور صرف ڈر کی بنا پر یہ قدم اٹھایا اور ایمبیسی میں پناہ گزیں رہے۔ وکیل نے کہا کہ ان کو ڈر تھا کہ انھیں خفیہ امریکی سفارتی راز افشاں کرنے کی پاداش میں امریکہ کے حوالے کر دیا جائے گا، اس لیے وہ پناہ گزیں ہوگئے تھے۔ وکیل نے مزید کہا کہ جولین اسانجے کو ڈر تھا کہ انھیں امریکی راز اجشاں کرنے والے متعدد لوگوں کی طرح کیوبا سرحد پر موجود امریکی جیل گوانتاناموبے میں قید کر دیا جائے گا اور تشدد کا نشانہ بنایا جائے گا۔

جولین اسانجے وکی لیکس کے بانی شریک ہیں، جولین اسانجے2010 میں وکی لیکس کی طرف سے انٹرنیٹ پر افشاں کیے جانے والے خفیہ اور حساس مواد کی وجہ سے شہہ سرخیوں کا حصہ رہے ہیں، ان رازوں میں امریکہ اور افواجِ امریکہ کے کئی راز افشاں کیے گئے تھے۔ جن کی پاداش میں جولین اسانجے کو امریکہ سے خطرہ ہے۔

یاد رہے کہ جولین اسانجے کو برطانوی عدلیہ کی طرف سے دی گئی یہ سزا ضمانت پر رہا ہونے کے بعد فرار ہوجانے اور مزید عدالتی کاروائی سے بچنے کے جرم میں دی گئی۔

Check Also

Urdu Shayari-Urdu Poetry – Urdu Shayari – Best Poetry In Urdu..

Urdu Shayari-Urdu Poetry – Urdu Shayari – Best Poetry In Urdu Urdu Shayari-Urdu Poetry – …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *