Home / انٹرنیشنل / ایران نے جوہری ہتھیاروں کے معاہدے کو بچانے کے لیے ٹھوس اقدامات کرنے کا مطالبہ کر دیا

ایران نے جوہری ہتھیاروں کے معاہدے کو بچانے کے لیے ٹھوس اقدامات کرنے کا مطالبہ کر دیا

ایرانی وزیرِ خارجہ نے بیجنگ کے دورے میں ایران کے دوست ممالک چین اور روس پر زور دیا کہ وہ ایران اور امریکہ کے مابین تجارتی تعلقات کی بہتری کے لیے کر دار ادا کریں۔

ایرانی وزیرِ خارجہ محمد جاوید ظریف نے چین اور روس سے مطالبہ کیا کہ وہ تہران اور واشنگٹن کے مابین جاری کشیدگی کی بہتری کے لیے ٹھوس اقامات کریں، اور جوہری ہتھیاروں کے معاہدے کو بچانے کے لیے بھی کوئی پختہ لاحۂِ عمل اپنائیں۔ ایران کا مزید مطالبہ ہے کہ ایران پر امریکہ کی طرف سے لگائی گئی پابندیوں میں نرمی کروائی جائے، اور ایران کا ساتھ دیا جائے۔ ایران نے اس سے پہلے بھی اس معاہدے کا حصہ ممالک سے کہا تھا کہ اس معاہدے کو بچانے کے لیے ایران کا ساتھ دیں اور ایران سے کیے گئے وعدوں کو پورا کریں۔

محمد ظریف نے اپنے چینی ہم منصب سے بات کرتے ہوئے کہا کہ ایران اور چین کو اکھٹے سوچنا چاہیے، اور ایک کثیر عالمی آرڈر پر اکٹھے کام کرنا چاہیے، جو کسی ایک ملک کے مفاد میں نہ ہو، بلکہ ہر کسی کا فائدہ ہو۔

ایران اور امریکہ کے مابین جاری کشیدہ حالات کی وجہ سے خطرہ لاحق ہو گیا ہے کہ 2015 میں کیاگیا جوہری ہتھیاروں کی روک تھام کا معاہدہ کہیں ختم نہ ہوجائے۔ امریکہ کی طرف سے ایران پر لگائی گئی پابندیوں کے بعد سے ایران معاشی اور تجارتی بحرانی کا شکار ہے، ایران نے اعلان کیا ہے کہاگر امریکہ کی طرف سے لگائی گئی پابندیاں ختم نہ کروائی گئیں تو ایران بھی اس معاہدے سے نکل جائے گا، جو عالمی طور پر خطرے کی علامت ہے۔ اس معاہدے کا حصہ ممالک نے ان حالات پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے ایران سے کیے گئے معاہدے کو بچانے اور جاری رکھنے کا اعلان کیا ہے۔

ایران کے وزیرِ خارجہ محمد جاویدظریف کا یہ دورہ چین سفارتی طریقوں سے اس معاہدے کو بچانے اور جاری رکھنے کی کوشش ہے۔

یاد رہے کہ امریکہ اور ایران کے مابین حالات انتہائی کشیدہ ہیں، ایران میں مشرقِ وسطیٰ میں امریکی مفادات کو نقصان پہنچانے کا اعلان کیا تھا، جس کے بعد امریکہ نے کئی جنگی بمبار جہاز، اور اس کے علاوہ خلیج میں دو بڑے جنگی بحری بیڑے بھی اتار دیے ہیں، امریکہ نے ایران کو دھمکی دی ہے کہ اگر امریکی مفاد کو نقصان پہنچا تو ایران کو جواب دینا ہوگا۔

ایران پچھلے کئی دنوں سے 2015میں کیے گئے جوہری ہتھیاروں کے معاہدے کا حصہ ممالک سے درخواست کر رہا ہے کہ ایران اور امریکہ کے مسئلے کا حل نکالا جائے۔ امریکہ پچھلے سال اس معاہدے سے نکل گیا تھا اور ایران پر پابندیاں عائد کر دی تھیں۔ ایران امریکی پابندیوں کے باعث شدید معاشی اور تجارتی بحران کا شکار ہے۔ ایران نے عندیہ دیا تھا کہ اگر اس معاہدے پر عمل نہ کیا گیا اور ایران ؎پر لگی پابندیاں ختم نہ کروائی گئی تو ایران بھی اس معاہدے سے پیچھے ہٹ جائے گا۔

Check Also

ایپل کے نئے آئی فون 11 کی پاکستان میں قیمت کیا ہوگی؟تفصیل اس خبرمیں

میں ایپل کے نئے آئی فون 11 کی پاکستان میں قیمت کیا ہوگی؟تفصیل اس خبر …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *