Home / Uncategorized / خرطوم، سوڈان: ملٹری کا حکومت عوامی نمائندوں کے سپرد کرنے کا فیصلہ، لیکن عوامی احتجاج اب بھی جاری

خرطوم، سوڈان: ملٹری کا حکومت عوامی نمائندوں کے سپرد کرنے کا فیصلہ، لیکن عوامی احتجاج اب بھی جاری

سوڈانی فوج نے عوام سے وعدہ کیا کہ وہ بہت جلد حکومت عوامی نمائندوں کے حوالے کر دے گی مگر اب بھی عوامی رہنما ایک بڑی تعداد کے ساتھ احتجاج میں مصروف ہیں۔

سابق سوڈانی صدر عمر البشیرکی حکومت کے خاتمے کو دو ہفتے بیت گئے اور اب تک سوڈانی حکومت ملٹری کونسل کے اختیار میں ہے، جس نے عوام سے وعدہ کیا تھا کہ اگلے دو سال میں سوڈانی حکومت عوامی نمائندوں کے حوالے کر دی جائے گی۔ جس پر اپوزیشن نمائندوں نے احتجاج نہ ختم کرنے اعلان کیا تھا اور کہا تھا کہ انہیں آرمی کا اتنے عرصے اقتدار میں رہنا ہر گز منظور نہیں۔ ان کا احتجاج تب تک جاری رہے گا کہ جب تک حکومت عوامی نمائندوں کے سپرد نہیں کر دی جاتی۔

اتوار کے روز اپوزیشن رہنماؤں نے ملٹری کونسل سے کسی بھی قسم کے مذاکرات جاری رکھنے سے انکار کر دیا ، انہوں نے کہا کہ انہیں ملٹری کونسل کے اس وعدے کا اعتبار نہیں ہے کہ وہ حکومت عوامی نمائندوں کے خلاف کر دینگے۔

لفٹیننٹ جنرل الفتح البرہان نے ٹی وی پر عوام سے خطاب کے دوران کہا کہ ’’ انقلاب اور بغاوت کو پایہ تکمیل تک پہنچانے کے لیے ملٹری کونسل کا ہونا بہت ضروری ہے، کونسل اقتدار عوامی نمائندوں کے سپر کر دے گی‘‘۔

انہوں نے مزید کہا کہ’’ ہمیں اقتدار کا کوئی لالچ نہیں ہے، ہم حکومت میں اپوزیشن سے کیے گئے وعدے سے زیادہ نہیں رہیں گے، ہمیں اپوزیشن جماعتوں کی تجویز کا انتظار ہے‘‘۔

سوڈانی عوامی لیڈرز نے خرطوم میں ایک بڑی ریلی سے خطاب میں کہا کہ ملٹری انکے مطالبات پورے کرنے میں ناکام ہوگئی ہے، اب کوئی مذاکرات نہیں ہونگے، اب مزید احتجاج ہوگا۔

’’ ہم اپنا احتجاج جاری رکھیں گے، ہم احتجاج مزید طاقتور بنائیں گے، ہم ملٹری کونسل کا بائیکاٹ کریں گے‘‘۔ ترجمان سوڈان پروفیشنل ایسوسی ایشن محمد ال امین

Check Also

اہلیہ فاطمہ پر تشدد ، محسن عباس نے جواب دے دیا

عروف گلوکار و اداکار محسن عباس نے اہلیہ کی جانب سے خود پر لگائے جانے …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *